دھرنوں اور رستوں کی بندش سے بر آمد کنندگان کو بھاری مالی نقصان کا خدشہ ،400سے زائد کنٹینرز داخلی راستوں پر روک لئے گئے


کراچی(این این آئی)کراچی کے مختلف مقامات پر دھرنوں اور رستوں کی بندش سے کینو کی بر آمد متاثر ہوگئی ہے جس کے نتیجے میںبر آمد کنندگان کو بھاری مالی نقصان کا خدشہ ہے ۔تفصیلات کے مطابق کراچی میں دھرنوں اور راستوں کی بندش کے نتیجے میںکینو کے400سے زائد کنٹینرز کراچی اور سندھ کے داخلی رستو ں پر رک گئےہیں،آل پاکستان فروٹ اینڈ ویجیٹیبل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے سرپرست اعلیٰ وحید احمد کے مطابق ان 400کنٹینرز میں46لاکھ ڈالرز سے زائد مالیت کا کینو موجود ہے اور اگر ریفر کنٹینرز کو بجلی سے منسلک نہ کیا گیا تو سڑکو ں پر کھڑ

ے ان کنٹینرز میںموجود لاکھوں ڈالرز مالیت کے کینو خراب ہونے کا خدشہ ہے جس کے نتیجے میںبر آمد کنندگان کو بھاری مالی نقصان اٹھانا پڑسکتا ہے ،وحید احمد نے وفاقی حکومت سے اپیل کی کہ اس مسئلے کے حل کیلئے فوری اقدامات کئے جائیں تا کہ بر آمدی کنسائمنٹس کو بندر گاہ تک پہنچایا جاسکے ،وحید احمد کا مزید کہنا تھا کہ کنٹینرز اور جہازوں کی قلت کے باعث پہلے ہی بر آمد کنندگان کو چار گنا زائد فریٹ ادا کرنا پڑ رہے ہیں اور ایسے میں بر آمدات میںتاخیر ان کیلئے مزید مالی نقصان کا باعث بن سکتی ہے۔دوسری جانب آل پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ اونرز ایسوسی ایشن نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ملک بھر کی قومی شاہراہوں کوفوری طور پر کھلوایا جائے جوہزارہ برادری کے احتجاج کی وجہ سے ملک بھر کی شاہراہیں بلاک ہو چکی ہیں۔آل پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ اونرز ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری اویس چوہدری ایڈووکیٹ نے کہا کہ دھرنوں کی وجہ سے پاکستان کی اہم قومی شاہراہیں بند ہیں اوراسی وجہ سے ہمارے ڈرائیورز شدید مشکلات کا شکار ہیں،  اگر یہی صورتحال برقرار رہی تو ہمارے لیے کاروبار کرنا مشکل ہو جائے گا۔





Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں