طلبہ پر یونیفارم پہننا لازمی، لڑکیوں کو میک اپ کرکے یا جینز شرٹ پہن کر یونیورسٹی آنے کی اجازت نہیں ہوگی، یونیورسٹی میں لڑکوں پر بھی بڑی پابندی عائد


صوابی(مانیٹرنگ +این این آئی) ہزارہ یونیورسٹی نے طلبہ و طالبات کے لئے ضابطہ اخلاق جاری کیا ہے، یونیورسٹی کے اعلامیے کے مطابق اسکارف، برقعہ اور دوپٹہ طالبات کے یونیفارم کا لازمی حصہ ہو گا ، طالبات پر یونیورسٹی کے اندر میک اپ، جیولری اور کھلے بال رکھنے پر بھی پابندی لگا دی گئی ہے، طالبات پر جینز پہننے، کلائی زنجیرپہننے اور بھاری بیگ لانے پربھی پابندی عائد کی گئی ہے جبکہ طلبہ پر لمبے بال رکھنے اور فینسی داڑھی رکھنے پر بھی پابندی عائد کی گئی ہے۔ طلبہ پر یونیفارم پہننا لازمی قرار دیا گیا ہے، وومن یونیورسٹی صوابی کی

وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر شہانہ اروج کاظمی کی زیر صدارت یونیورسٹی میں خواتین یونیورسٹی صوابی کی اکیڈمک کونسل کا ایک اجلاس ہوا۔ کونسل نے کرونا کے بعد آن لائن کلاسوں کے کامیاب انعقاد کو یقینی بنانے میں فیکلٹی ممبران کی کاوشوں کو سراہا اور وائس چانسلر کی تعلیمی قیادت کی تعریف کی۔ فیصلہ کیا گیا کہ حتمی امتحانات کیمپس میں منعقد ہوں گے جس کے بعد حکومت کے اعلان کے مطابق یکم فروری 2021 کو یونیورسٹیاں کھلیں گی۔ کونسل نے یونیورسٹی کے طلبہ کے لئے یونیفارم متعارف کروانے کی بھی منظوری دی۔چانسلر / گورنر کی ہدایت کو مدنظر رکھتے ہوئے اور اس حقیقت کی وجہ سے کہ ہمارے طلباء معاشرے کے متوسط طبقے اور نچلے طبقے کے طبقے سے تعلق رکھتے ہیں، انفارمیشن متعارف کرانا ایک بہت بڑا قدم ہے کیونکہ اس سے ہمارے طلباء پر معاشرتی دباؤ نہیں پڑے گا۔ ڈاکٹر شاہانہ نے مزید کہافیکلٹی ممبران اساتذہ کے تقدس کو برقرار رکھنے کے لئے کیمپس کے اندر گاؤن پہنیں گے کونسل نے جامع امتحانات کے تعارف کی بھی منظوری دی اور ڈگری حاصل کرنے سے پہلے ہر طالب علم کے لئے اسے پاس کرنا لازمی قرار دے دیاہم بیرونی تشخیص کو یقینی بنانا چاہتے ہیں اور جامع امتحانات کے ذریعے، ہم منصفانہ جمع اور معیاری تعلیم کو یقینی بنائیں گے ای کونسل نے انسداد ہراساں کرنے کی پالیسیوں پر یونیورسٹی انتظامیہ کی کاوشوں اور کیمپس میں ہراسانی سے پاک ماحول کو یقینی بنانے میں فیکلٹی کے کردار کو سراہا۔





Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں