نئی آٹو پالیسی2022-26 :گاڑیوں کی قیمتوں میں بڑی کمی کا امکان


اسلام آباد (نیوز ڈیسک )سال 2022 پاکستان میں آٹو میٹو سیکٹر کیلئے خوشگوار سال ثابت ہونے والا ہے، نئی آٹو ڈولیپمنٹ پالیسی(اے ڈی پی) ہے جس کے متعارف ہونے کے بعد ملک میں گاڑیوں کی قیمتوں میں کمی کا امکان ہے۔معروف آٹو ویب سائٹ پاک وہیلز کی ایک رپورٹ کے مطابق 2022 میں موجودہ اے ڈی پی ایکسپائر ہورہی ہے اور حکومت اس کی جگہ  اگلے پانچ سالوں کیلئےنئی پالیسی متعارف کروانے والی ہے، امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ نئی پالیسی کے اطلاق کے بعد ملک میں گاڑیوں کی قیمتوں میں کمی واقع ہونے کے ساتھ ساتھ ان کی

ایکسپورٹس کیلئے اقدامات کیے جائیں گے۔وزارت صنعت و پیداوار ذرائع کے مطابق نئی اے ڈی پی کے تحت چھوٹی گاڑیوں کی قیمتوں میں کمی واقع ہوسکتی ہے، حکومت کا پروگرام ہے کہ ملک میں متوسط طبقے سے تعلق رکھنے والے لوگ بھی گاڑی خرید سکیں، اور اسی چیز کو مدنظر رکھتے ہوئے حکومت اوسط ایک چھوٹی گاڑی کی قیمت کو زیادہ سے زیادہ 10 لاکھ تک متعین کرنے پر غور کررہی ہے، اور اگر ایسا ممکن ہوگیا تو گاڑی خریدنے والوں کو ایک چھوٹی گاڑی خریدتے وقت 4 سے 5 لاکھ روپے کی بچت متوقع ہے۔اس پالیسی کا دوسرا حوصلہ افزاء پہلو یہ ہے کہ حکومت مقامی گاڑیوں کے غلبے کو ختم کرنے کیلئے امپورٹڈ گاڑیوں کے ٹیکسز اور ڈیوٹیز کم کرنے پر غور کررہی ہے، اس وقت بیرون ملک سے گاڑی امپورٹ کرنے پر 30 سے 40 فیصد ٹیکس اور ڈیوٹیز ادا کرنی پڑتی ہیں جس سے گاڑیوں کی امپورٹ میں کمی واقع ہوتی ہے، حکومت کا پروگرام ہے کہ گاڑیوں کی امپورٹ پر ٹیکسز کم کیے جائیں ۔واضح رہے کہ موجودہ اے ڈی پی اگلے برس 2021 کے جون کی 30 تاریخ کو ایکسپائر ہوجائے گی، جس کے بعد یکم جولائی 2021سے نئی پالیسی نافذ العمل ہوجائے گی۔





Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں