کوروناسے انتقال کرنیوالے شخص کے پھیپھڑے چمڑے کی طرح سخت ہو گئے،انتقال کے 18 گھنٹے بعد بھی کیا چیز موجود تھی؟ ماہرین کا حیرت انگیز انکشاف


نئی دہلی (این این آئی)کورونا وائرس انسان کے جسم میں داخل ہونے کے بعد سب سے پہلے پھیپھڑوں کو متاثر کرتا ہے اور اسی وجہ سے انسان کو سانس لینے بھی دشواری ہوتی ہے۔اب حال ہی میں کورونا وائرس کا ایک خطرناک کیس دیکھنے میں آیا ہے جس میں انتقال کرنے والے62 سالہ شخص کے پھیپھڑے چمڑے کی طرح سخت ہو گئے تھے۔بھارتی ٹی وی کے مطابق بھارتی ریاست کرناٹکا میں ایک 62 سالہ شخص کورونا وائرس میں مبتلا ہوا اور وائرس ان کے پھیپھڑوں میں اتنا پھیل گیا کہ اس کے پھیپھڑے چمڑے کی طرح سخت ہو گئے۔62 سالہ

مریض پھیپھڑوں میں کورونا وائرس کی شدت سے بھی زیادہ پھیلنے کے باعث انتقال کر گیا اور ماہرین نے انکشاف کیا کہ ان کے انتقال کو 18 گھنٹے گزرنے کے باوجود بھی ان کی ناک اور گلے میں کورونا وائرس ایکٹو(فعال)تھا اور اس سے کوئی بھی دوسرا شخص متاثر ہو سکتا تھا۔آکسفورڈ میڈیکل کالج کے ڈاکٹر دنیش را کا کہنا تھا کہ مریض کے پھیپھڑے چمڑے کی طرح سخت ہو گئے تھے اور اس مریض سے انہیں کورونا وائرس کے پھیلا کو سمجھنے میں کافی مدد ملی ہے۔انہوں نے بتایا کہ کورونا سے مرنے والے مریض کی لاش کو ان کے خاندان کی رضامندی کے بعد ہی پوسٹ مارٹم کے لیے بھیجی گئی تھی۔ڈاکٹر دنیش را نے مزید کہا کہ اس مریض کے جسم کی جانچ کر کے تیار کی جانے والی رپورٹ برطانیہ اور امریکا کے مریضوں کی رپورٹ سے کافی مختلف ہے جس کا یہ مطلب ہے کہ بھارت میں موجود کورونا وائرس دوسرے ممالک سے کافی مختلف ہے۔





Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں