گیس کی قلت اب ایسے پوری ہو گی حکومت نے عوام کو خوشخبری سنادی


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے پیٹرولیم ندیم بابر نے تیل و گیس سیکٹر میں نجی شعبہ کی آمد کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ گیس شارٹ فال ایل این جی کے ذریعے ہی پورا کیا جا سکتا ہے ۔ گزشتہ روز ملک کی پہلی نجی گیس کمپنی یوڈی سی جی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ وزیراعظم کا ویژن نجی شعبہ کیلئےآسانیاں پیدا کرنا ہے ، اگر تمام اجارہ داری سرکاری اداروں میں رکھیں گے تو معیشت کا پہیہ جام ہر کر رہ جائے گا، اگر نجی شعبہ

صارفین کو سستی گیس فراہم کر سکتا ہے تو حکومت حوصلہ افزائی کرے گی ۔ انہوں نے کہا حکومتی گیس کمپنیوں کو بتا دیا ہے کہ وہ ناکام ہو چکی ہیں ، اگر ان کمپنیوںکا حریت ہوتا تو صارفین کو پریشانیوں کا سامنا نہ کرنا پڑتا ، سندھ نے 17کلو میٹر کی ایل این جی لائن کے رائٹ آف وے کی حامی بھری ہے۔ دوسری جانب وزیر اعظم عمران خان نے کہاہے کہ توانائی کا شعبہ شدید بحران کا شکار ہے،سبسڈی کے نظام کو منصفانہ، شفاف اور مستحقین تک موثر طریقے سے پہنچانے کے نظام پر خصوصی توجہ دی جائے۔وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت توانائی کے شعبے میں جاری اصلاحات میں پیش رفت کے حوالے سے جائزہ اجلاس ہوا جس میں وفاقی وزراء اسد عمر، عمر ایوب، میاں محمد سومرو، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، معاونین خصوصی شہزاد قاسم، ندیم بابر اور ڈاکٹر ثانیہ نشتر و دیگر سینئر افسران شریک ہوئے۔اجلاس میں توانائی کے شعبے میں جاری اصلاحات کے عمل کو آگے بڑھانے اوراس حوالے سے مختلف اہداف کے حصول کے لئے مقرر شدہ ٹائم فریم کے حوالے سے وزیرِ اعظم کو تفصیلی بریفنگ دی گئی۔وزیرِ اعظم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ توانائی کا شعبہ شدید بحران کا شکار ہے، انہوں نے کہا کہ ماضی میں کیےجانے والے مہنگی بجلی کے معاہدوں کے بوجھ سے نہ صرف عام آدمی اور صنعتی شعبہ متاثر ہوا ہے بلکہ سستی بجلی فراہم کرنے کی کوشش میں گردشی قرضوں کا پہاڑ کھڑا ہوگیا ہے جس کا سارا بوجھ سرکاری خزانے پر پڑ رہا ہے۔ وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ سبسڈی کے نظام کو منصفانہ، شفاف اور مستحقین تک موثر طریقے سے پہنچانے کے نظام پر خصوصی توجہ دی جائے۔ وزیرِ اعظم نےہدایت کی کہ بجلی کے شعبے میں اصلاحات کے حوالے سے بجلی کی پیداوار، ضروریات، سال کے مختلف مہینوں میں استعمال میں اتار چڑھاؤ کی شرح، پیداواری لاگت، فروخت اور ریونیو اور بجلی کے نرخوں کی وجہ سے دیگر شعبوں پر اثرات سمیت مختلف پہلوؤں کو مدنظر رکھ کر حکمت عملی اور روڈ میپ کا تعین کیا جائے تاکہ نہ صرف اس شعبے کو بحران سے نکالا جا سکے بلکہ ایسا طریقہ کار اختیار کیا جائے کہ تمام شعبہ جات کی توانائی کی ضروریات احسن طریقے سے پوری کی جا سکیں۔‎





Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں